ارکان صوبائی اسمبلی ،ڈپٹی کمشنر کوئٹہ، سوئی گیس ، کیسکو اور دیگر محکو ںکے اعلیٰ حکام کا بجلی کی غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ ،گیس پریشر میں کمی بارے ہنگامی اجلاس

0

کوئٹہ( این این آئی)ارکان صوبائی اسمبلی ،ڈپٹی کمشنر کوئٹہ، سوئی گیس ، کیسکو اور دیگر محکو ںکے اعلیٰ حکام کا کوئٹہ میں بجلی کی غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ اور گیس پریشر کی کمی کے حوالے سے ایک ہنگامی ا جلاس ڈپٹی کمشنر کوئٹہ کے دفتر میں منعقد ہوا

 ۔اجلاس میںصوبائی مشیر کھیل و ثقافت عبدالخالق ہزارہ،اپوزیشن لیڈر ملک سکندرخان ایڈوکیٹ،چیئرمین پی اے سی اختر حسین لانگو، ائیڈوائزرمحکمہ توانائی مبین خان خلجی، مشیئر ریونیو ملک محمد نعیم ،ایم پی اے ملک نصیر احمد شاہوانی ایم پی اے عبدالقادر نائل ، ایم پی اے احمد نواز بلوچ ،ایم پی اے نصراللہ خان زئرے، ڈپٹی کمشنر کوئٹہ میجر (ر)اورنگزیب بادینی ، سی سی پی او کوئٹہ عبدالرزاق چیمہ، چیف انجینئر کیسکو بلوچستان محمد عرفان،ایکسئن کیسکو شوکت جوگیزئی اور جی ایم سوئی سدرن گیس کمپنی بلوچستان مدنی صدیقی موجود تھے۔ اجلاس میں ایم پی ایز نے اپنے اپنے حلقہ انتخاب اور مجموعی طور پر کوئٹہ شہر کو بجلی کی لوڈشیڈنگ اور گیس پریشر سے درپیش مسائل کو زیر بحث لایاگیا ۔بجلی کی لوڈشیڈنگ کے خاتمہ کے حوالے سے مستقل حل نکالنا چاہیے اوراس سلسلے میں انہوں نے کیسکو کے نمائندگان سے بات چیت کی جس پر کیسکو کے آفسرنے اپنے تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ حالیہ بارشوں اور برف باری کی وجہ سے جو لوڈشیڈنگ کا مسئلہ در پیش ہوا تھا کیسکو نے اپنے وسائل میں رہتے ہوئے کافی حد تک حل کرلیا ہے لیکن دیرینہ حل کے لیے کچھ اقدامات ہم سب کو مل کر کرنے پڑیںگے۔ آبادی میں اضافے اور پھیلاؤ کی وجہ سے سے بجلی کی ضرورت بڑھ گئی ہے جس کے لیے مزید فیڈرز درکار ہیں کیونکہ ٹرانسفارمرز اضافی لوڈ برداشت نہیں کرسکتے جس کی وجہ سے آئے روز ز ٹرانسفارمرز جل جاتے ہیں اور پھر ان کی مرمت اور تنصیب کرنے پر کافی وقت لگ جاتا ہے کوئٹہ میں ٹرانسفرمر مت کیلئے ایک ورکشاپ ہے جس کی اوسطا ًگنجائش 8 ٹرانسفارمرز کی مرمت کے اعلاوہ دیگر اضلاع کے ٹرانسفارمرز بھی ٹھیک ہونے کے لیے آتے ہیں اس حوالے سے بہت جلد ہی ورکشاپ میں افرادی قوت میں اضافہ کیا جائے گا۔ تاکہ کم وقت میں زیادہ ٹرانسفارمرز کی مرمت ہوسکے جبکہ کیسکو کو لائن لاسز کا سامنا کرنا پڑتا ہے جس کی بڑی وجہ غیرقانونی کنکشن اور بجلی کی چوری ہے جس کی وجہ سے لوڈشیڈنگ ناگزیر ہوجاتی ہے اس کے تدراک بھی ضروری ہیںاس پر تمام ممبران نے یقین دہانی کرائی ان کے ساتھ مکمل تعاون کے لئے تیار ہیںبجلی چوروں اور غیر قانونی کنکشنز ز کے خاتمے میں حائل رکاوٹوں کو قانون کی مدد سے دور کریں گے اور جن علاقوں کے ریکوری بہتر ہوگی ان کو لوڈشیڈنگ سے مستثنیٰ ا کیا جائے گا۔ کیسکو ترجمان نے کہا کہ نئے20 فیڈرز کی منظوری کا عمل جاری ہے جس میں سے 10فیڈرز جلد ہی دو سے تین ماہ کے اند ر سسٹم میں شامل ہو جائینگے لیکن نئے کھمبوں کی تنصیبات کے حوالے سے تعاون درکار ہے۔حالیہ بارشوں اور برفباری کی وجہ سے اس وقت 40ٹرانسفارمرز مرمت کے لیے ورکشاپ میں میں موجود ہیں جو چند روز میں ٹھیک کردیے جائیں گے جس سے بجلی کی ترسیل مزید بہتر ہو جائے گی اور آئندہ کسی بھی ہنگامی صورت حال کے پیش نظر اسٹینڈبائی ٹرانسفارمرز کو بھی یقینی بنایا جائیگا ۔ غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کا تدراک کیا جائیگااور جب تک لوڈشیڈنگ سے مکمل نجات نہیں مل جاتی اعلانیہ لوڈشیڈنگ کی جائے گی جس کے لیے واسا کے حکام سے بھی مشاورت کی جائے گی تاکہ لوگوں کو پانی کی فراہمی میں کوئی خلل نہ آ سکے۔سوئی گیس کی بندش اور پریشرکے مسائل کے حوالے سے بات کرتے ہوئے جی ایم سوئی سدرن گیس کمپنی نے کہا کہ گیس کا بحران پورے ملک میں ہے جس کی وجہ اس کی پیداوار میں کمی ہے ۔ اس کے علاوہ گیس کی کھپت بڑھنے اور نئے جاری صنعتی و ترقیاتی منصوبوں کہ استعمال میں آنے کی وجہ سے بھی کمی کا سامنا ہے۔تاہم وزیراعظم کی ہدایت کے مطابق کوئٹہ میں بہت جلد اس شارٹ فال کا آزالہ کیا جائے گا اور گیس کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے گا اوردنو ں میں اتوار سے گیس میں بہتری آنا شروع ہو جائی گی۔انہوں نے مزید کہا کہ سوئی سدرن گیس کمپنی مستقل بنیادوں پر گیس کے مسئلے کو حل کرنے کے لئے کچھ اقدامات کرنے ناگزیر ہوںگے جیسا کہ گیس چوری گا اور کمپریسر کے استعمال پر پابندی لگانے کے ساتھ ساتھ ساتھ سخت اقدامات کرنے پڑیں گے لوگ کمپریسر لگا کر دوسرے صارفین کی حق تلفی ہورہی ہیں۔ سردیوں میں چونکہ گیس کے استعمال میں اضافہ ہو جاتا لہذا ہم ہر ممکن کوشش کریں گے کہ کوئٹہ کے تمام علاقوں کو یکساں طورپر پریشر کے ساتھ گیس کی فراہمی کو یقینی بنائیں گے۔ اجلا س کے آخر میں تمام ایم پی اے نے ان اہم مسائل کے حوالے سے سب کو اعتماد میں لے کر اجلاس منعقد کروایا اور ہم سب مل کر بہت جلد کوئٹہ کوان مسائل سے چھٹکارا دلائینگے اور اسی سلسلے میں ہر ماہ ایک جائزہ اجلاس منعقد کیا جائے گا جس میں اٹھائے گئے اقدامات،کارکردگی سمیت دیگر امور پر جائزہ لیا جائے گا۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.