طالبان سے منسوب بھارت سے متعلق زیر گردش خبروں میں کوئی صداقت نہیں، سہیل شاہین

0

دوحہ: افغان طالبان نے بھارت اور کشمیر پر حملے سے متعلق ٹوئٹس کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ بیانات من گھڑت اور بے سروپا ہیں، امارات اسلامیہ کی پالیسی واضح ہے کہ کسی بھی دوسرے ممالک کے اندرونی معاملات میں مداخلت پر یقین نہیں رکھتے۔بین الاقوامی میڈیا کے مطابق چند دن قبل سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر قطر میں طالبان کے سیاسی دفتر کے نائب سربراہ شیر محمد عباس استنکزئی کے حوالے سے مختلف ٹوئٹس زیر گردش تھیں۔ان ٹوئٹس میں کہا گیا تھا کہ طالبان عیدالفطر کے بعد بھارت پر حملہ کردیں گے اور کشمیر میں جاری ‘جہاد’ کا حصہ بن جائیں گے۔اس کے علاوہ ایسی خبریں بھی زیر گردش تھیں کہ طالبان نے بھارت کو مذاکرات کی پیشکش کی ہے۔تاہم طالبان کے ترجمان نے نے ایسی تمام تر قیاس آرائیوں خصوصا بھارت پر حملے کی افواہوں کو مسترد کردیا ہے۔طالبان کے سیاسی دفتر کے ترجمان سہیل شاہین نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپنے پیغام میں کہا کہ بھارت کے بارے میں کچھ میڈیا میں جو بیان شائع ہوا ہے اس کا امارت اسلامیہ سے کوئی تعلق نہیں، امارت اسلامیہ کی پالیسی واضح ہے کہ وہ دوسرے ممالک کے اندرونی معاملات میں مداخلت نہیں کرتی ہے۔شیر محمد عباس استنکزئی نے بھی اپنے حوالے سے زیر گردش بیان کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ ان کا کوئی ٹوئٹر اکانٹ نہیں جبکہ افغان طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے بھی کہا کہ اس بیان کو کوئی اہمیت نہ دی جائے۔واضح رہے کہ یہ بیانات اس لیے زیادہ اہمیت اختیار کر گئے تھے کہ گزشتہ دنوں افغانستان کے امور کے لیے امریکا کے نمائندہ خصوصی زلمے خلیل زاد نے بھارت کا دورہ کیا تھا اور اس دورے کو افغان امن عمل کے تناظر میں انتہائی اہمیت دی جا رہی تھی۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.